نجانے کن کی نااہلی اور غیر ذمہ داریوں کی بدولت مدنی محلہ جہلم مشکلات کا شکار

Spread the love

جہلم (اختر شاہ عارف)جہلم شہر اور بالخصوص مدنی محلہ گندے اور بدبودار پانیوں میں ڈوبا ہوا ہے۔یوں لگتا ہے کہ جیسے اس محلے میں گندے پانیوں کی نکاسی کے لیئے کوئی باقاعدہ منصوبہ بندی نہیں کی گئی۔گٹرز ہیں کہ مدتوں سے بند پڑے ہوئے ہیں۔نالیاں ہیں کہ نکاسی کا مناسب انتظام نہ ہونے کے سبب ابل ابل کر گلیوں میں بہہ رہی ہیں۔صفائی کرنے والا عملہ ہے۔کہ وہ پیسے بنانے کے چکروں میں صرف انہی لوگوں کے گھروں کے سامنے سے گندگی اور کوڑا کرکٹ اٹھاتا ہے جہاں کے مالکان اسے باقاعدہ “منتھلی” دیتے ہیں۔کچھ ایسا کام چور عملہ بھی ہے۔جو اپنے علاقے کی صفائی کے ذمہ دار سپروائز کو اپنی تنخواہ کا کچھ حصہ دان کر دیتا ہے۔اور پورا مہینہ یا گھر بیٹھا رہتا ہے۔یا صاحب ثروت لوگوں کے گھروں میں پرائیویٹ کام کرتا اور پیسے بناتا رہتا ہے۔یہ بھی سنا گیا ہے کہ صفائی والے عملے کے کچھ لوگ انتظامیہ کے افسران کے گھروں میں کام کرنے کے لیئے مختص کر دیئے جاتے ہیں۔یہ تصاویر مدنی محلہ جہلم کی ہے۔یہاں پر سکول اور مدرسے ہیں۔مگر یہاں سے گندے پانی،بارش کے پانی اور گٹرز کی غلاظتوں اور صفائی والے عملے کی غیر موجودگی کی بدولت نکاسی کا مناسب انتظام نہیں ہے ۔جس کی وجہ سے یہ گندہ پانی گھنٹوں نہیں بلکہ ہفتوں کھڑا رہتا ہے ۔افسوس اور دکھ کی بات تو یہ ہے۔کہ صفائی کے حوالے سے،ابلتے ہوئے گٹرز اور گندے پانی کی مناسب نکاسی کے حوالے سے نہ کوئی ذمہ داری لینے کو تیار ہے۔اور نہ ہی کوئی مناسب جواب دینے کو تیار۔سارے کے سارے متعلقہ ادارے سیاسی لیڈروں کی طرح ایک دوسرے کو ان مشکلات کا ذمہ دار ٹھہرا کر خود دامن جھاڑ کر ہر چیز سے بری الزمہ ہو جاتے ہیں۔
میری تمام انتظامیہ اور صاحبانِ اختیار سے یہ انتہائی عاجزانہ درخواست ہے۔کہ خدا را ایک بار اپنے قیمتی وقت سے فرصت کے چند لمحات نکال کر مدنی محلہ سمیت پورے شہر کا دورہ کر کے اپنی آنکھوں سے جگہ جگہ گندگی اور غلاظتوں کے ڈھیر دیکھیں۔گلی محلوں میں ابلتے ہوئے گٹرز اور نالیوں سے بہتے ہوئے گندے بدبودار پانیوں کو سڑکوں گلیوں میں بہتے ہوئے دیکھیں۔ کہ “صفائی نصف ایمان ہے”کے پیروکار کن مشکلات کا شکار ہیں۔ہم نہیں جانتے کہ ان سب مسائل کا ذمہ دار کون سا ادارہ ہے اور نہ ہی ہمیں متعلقہ ادارے بتاتے ہیں۔وہ تو بس ایک دوسرے کو مورد الزام ٹھہرا کر”دیہاڑیاں” لگاتے اور “ڈنگ ٹپاتے”جا رہے ہیں ۔اس لیئے آپ ان تمام اداروں اور ذمہ داران کو ان کی ذمہ داریاں پوری کرنے میں اپنا کردار ادا کریں۔اگر آپ اپنی مصروفیات کے باعث ان مسائل پر توجہ نہیں دے سکتے تو پھر ہمیں بتا دیجیئے کہ ان تمام مسائل کا ذمہ دار کون ہے ۔تاکہ ہم اپنا دکھڑا اس کے سامنے رو کر اپنے مسائل کا حل نکال سکیں۔امید ہے آپ صفائی والے مسائل پر ضرور غور فرمائیں گے ۔

Please follow and like us:

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں