جنرل حمید گل 15 اگست کو خالق حقیقی سے جا ملے

Spread the love

کھیوڑہ (راشدخان)
جنرل حمید گل 15 اگست کو خالق حقیقی سے جا ملے حمید گل وہ عظیم سپہ سالار تھے جن سے دشمن حقیقت میں خوف کھاتا تھا
’’اے پتر ہٹاں تے نہیں وکدے۔۔۔۔جنرل حمید گل ؒایک عظیم جرنیل‘‘
’’حمید گلؒ دنیا کے خطرناک ترین جنرلز میں سے ہیں‘‘(امریکی حکومت)
حمید گل ؒدنیا کے پانچ بڑے دماغوں میں سے ہیں۔ (سی آئی اے)
حمید گل ؒاکھنڈ بھارت کی راہ میں سب سے بڑی رکاوٹ تھے۔(انڈین ایکسپریس)
جنرل حمید گلؒ کی پالیسیوں کی وجہ سے راء کے چیف نے گھٹنے ٹیک دئیے تھے۔(بھارتی سوشانت سنگھ)
حمید گل ؒ ریٹائرمنٹ کے بعد بھی بھارت کے لیے حاضر سروس دشمن ثابت ہوئے۔(انڈین ایکسپرس)
تعریف وہ جو دشمن کرے ۔ بہادری وہ جسکا اعتراف سمندر پار ہوتا تھا۔ سوچ کی اپروچ اس لیول پہ کہ دشمن چکرا کے رہ جاتا تھا ۔ جنرل حمید گل ؒاس پاک دھرتی کا وہ بطل حریت وسپاہ گری تھا کہ جس نے بطور بریگیڈئر برطانیہ کے عالمی شہرت یافتہ رائل وار کالج کا عسکری کورس یہ کہہ کر مسترد کردیا کہ ’’انگریز کون ہوتا ہے مجھے جنگ سکھانے والا،وطن کا دفاع اپنی مٹی کے جس فہم سے آتا ہے،وہ میرے لہوں میں دوڑتا ہے‘‘۔
اس دبنگ شخص کو پاکستان کی تاریخ کا سب سے کم عمر لیفٹیننٹ جنرل ہونے کا اعزاز حاصل تھا۔اس مرد حُر نے ہیوی انڈسٹری ٹیکسلا کا چارج اس پیشہ ورانہ منطق کے ساتھ ٹھکرا دیا تھا ’’میں فوج میں ٹینک بنانے کے لیے نہیں بلکہ ٹینک چلانے کے لیے آیا ہوں،میں کسی فیکٹری کا منیجر نہیں پاکستان کا سپاہی ہوں۔اس عظیم شخص کے جذبہ حب الوطنی اور جہد ملی پر اس کے بدترین نظریات مخالف بھی رشک کرتے تھے۔
اپنی پیشہ وارانہ زندگی سے آخری سانس تک وہ سا لمیت پاکستان،استحکام پاکستان،دفاع پاکستان اور بقائے پاکستان کی جنگ لڑنے کے لیے ہمیشہ ایک مجاہد کی طرح میدان عمل میں سرگرم رہے۔وہ بیک وقت پاکستان کی جغرافیائی ونظریاتی سرحدوں کے نمایاںمحافظوں میں سے ایک تھے۔آپ نے ہمیشہ یاد رکھی جانے والی زندگی گزاری،اسی لیے کام نام تاریخ میں ہمیشہ یاد رکھا جائے گا۔جنرل حمید گلؒ کانام آج بھی دشمنوں کے دلوں میں ہبیت اور لرزہ طاری کردیتا ہے۔آپ کی ناگہانی وفات پر بھارت،امریکا سمیت تمام دشمنان اسلام اور وطن نے خوشیوں کے شادیانے بجائے جشن کا سماں تھا کہ آج انکی راہ میں سب سے بڑی رکاوٹ جنرل حمید گلؒ اس دنیا میں نہیں رہے۔
تاریخ کا یہ عظیم باب 15 اگست 2015 کو بند ہو گیا۔ آپ اس دارفانی سے دارلبقاء کو کوچ کر گئے ۔ مگر اپنی خدمات ، قربانیوں سے جو تاریخ رقم کی وہ رہتی دنیا تک سنہرے الفاظ میں مزین رہے گی ۔
قوم کے اس سپوت کو سلام ۔۔۔ اللہ پاک جنت الفردوس میں اعلی مقام عطا فرمائے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں