بھاری بلوں نے صارفین کی چیخیں نکال دیں

Spread the love

جہلم(چوہدری عابد محمود +مرزاکفیل بیگ کیفی)جہلم شہر سمیت مضافاتی علاقوں میں بجلی کے بل معمول سے ہٹ کر ہزاروں روپے اضافے کے ساتھ صارفین کو موصول ہوئے، بھاری بلوں نے صارفین کی چیخیں نکال دیں، 5 سے 8 ہزار تک آنے والے بجلی کے بل 15 سے 20 ہزار میں کیسے بدل گئے، شہریوں کے اوسان خطا ہو گئے، بھاری بلز ملنے پر نچلے اور متوسط طبقے کے صارفین کا ماہانہ بجٹ بھی بری طرح متاثرہو گیا، مہنگائی کی پہلے سے پوری شدت کے ساتھ موجودہ لہر کے بعد 15/20اور22 ہزار بل ملنے پر چکرا جانے والے صارفین اب بھاری بلوں کی اقساط کرانے کے لئے آئیسکو کسٹمر ز سینٹرز پر پہنچنا شروع ہو گئے ہیں، واضح رہے کہ بجلی کے بھاری بلوں کی ایک بنیادی وجہ بجلی کے بڑھنے والے نرخوں سمیت بجلی کی چوری لائن لائسسز سے واپڈا کو پہنچنے والا نقصان بھی ہے، جس کی سزا آئیسکو سرکل کے تمام صارفین کو مل رہی ہے، بجلی چوری میں واپڈا ملازمین پکڑے جانے کے باوجود آئیسکو سرکل کے چیف کی طرف سے کسی قسم کی کوئی کارروائی عمل میں نہیں لائی گئی، جس کیوجہ سے واپڈا ملازمین دیدہ دلیری کے ساتھ شہر سمیت مضافاتی علاقوں کے بااثر افراد کے ساتھ ماہانہ طے کرکے بجلی چوری کروانے میں مصروف عمل ہیں، جس کی سزا غریب صارفین کے کھاتے میں ڈالی جارہی ہے۔ دریں اثناء صارفین کو موصول ہونیوالے بجلی کے بھاری بلوں کے بعد اپنی ضرورتوں کا از سرے نو تعین کرنا شروع کر دیا ہے اور 2 وقت کی روٹی مکان کے کرائے کے بعد بجلی کے بل کی ادائیگی کو اہم ترین ترجیح بنا لیا گیا، صارفین کا کہنا ہے کہ حکومت نے مہنگائی سے عوام کی پہلے ہی کمر توڑ کررکھ دی ہے اب بجلی کے بھاری بل بھجوا کر صارفین پر عرصہ حیات تنگ کر دیا گیا ہے،شہریوں نے وزیر اعظم پاکستان عمران خان، وفاقی وزیر پانی و بجلی سے مطالبہ کیاہے کہ آئیسکو سرکل جہلم میں تعینات کرپٹ، بدعنوان، رشوت خورملازمین کو نوکریوں سے برخاست کرکے بجلی چوری کے مقدمات درج کروا کر لوٹ مار کرنے والے افراد کو کیفر کردار تک پہنچایا جائے تاکہ محکمہ واپڈا معاشی طور پر بہتر ہو سکے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں