جمہوریت کے نام پر ملک میں آمریت کا نظام چلانے والی حکومت عوامی رد عمل کے خوف سے بوکھلاہٹ کا شکار ھو گئی

Spread the love

وزیرآباد (طارق ملک بیورو چیف )وزیرآباد : جمہوریت کے نام پر ملک میں آمریت کا نظام چلانے والی حکومت عوامی رد عمل کے خوف سے بوکھلاہٹ کا شکار ھو گئی ھے. پنجاب کے دیگر علاقوں کی طرح وزیرآباد میں بھی ایمرجنسی کا ماحول پیدا کر دیا گیا ھے.سول انتظامیہ نے سرکاری ملازمین کی بجائے سیاسی کارندوں کا روپ دھار کر انتقامی کاروائیوں کا بازار گرم کر دیا ھے. مسلم لیگی تاجروں کو ھراساں کرنے کے لیئے کاروباری ادارے سیل کیئے جا رہے ھیں.پکوان سنٹروں کو حاضرین جلسہ کے لیئے کھانا فراہم کرنے اور ساؤنڈ والوں کو ساونڈ سسٹم فراہم کرنے سے روک دیا گیا ھے.سرکاری اہلکار پکوان مراکز سے نیاز اور خیرات کے لیئے پکائی گئی دیگیں بھی اٹھا کر لے جا رہے ھیں.تحصیل بھر کے ٹرانسپورٹرز کو جلسہ کے لیے گاڑیاں فراہم نہ کرنے کا پابند کر دیا گیا ھے اور بے شمار گاڑیاں بند کر دی گئی ہیں.مسلم لیگی متحرک کارکنوں کو ماسک نہ پہننے کے الزام میں گرفتار کیا جا رھا ھے. جلسہ کے فلیکس پرنٹ کرنے والے پریس سیل کر دیے گئے ھیں.جی ٹی روڈ اور سیالکوٹ روڈ پرلوڈڈ ٹرالروں اور کنٹینرزکو سول انتظامیہ اور پولیس نے اپنی تحویل میں لے لیا ہے.ٹرالروں پر لدا سامان خراب ھو رھا ھے اور عملہ دربدر ہو کر فاقہ کشی کا شکار ھے.حکومتی عناصر.سیاسی کارندوں.اور سرکاری انتظامیہ کی ستم ظریفی اور اوچھے ہتھکنڈوں سے شہریوں میں شدید نفرت کی لہر پیدا ھو گئی ھے.امن وامان کی خراب صورت حال اور ظالمانہ مہنگائی کے ستائے عوام اپنا غصہ نکالنے کے لیے بیتابی سے وزیرآباد پی پی 51 میں ضمنی الیکشن کا انتظار کر رھے ھیں.موجودہ سیاسی صورت حال اور ماحول کو دیکھ کر سیاسی مفکرین کا تجزیہ ھے کہ موجودہ تحریک ناکام حکومت کی تباہی کا پیش خیمہ ثابت ھو گی اور وزیرآباد کے ضمنی انتحاب میں حکومتی امیدوار عوامی نفرت کے ووٹوں کے سیلاب میں بہ جائے گا

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں