ذوان کوکی خیل اتحاد تنظیم قومیت کی بنیاد پر نہیں بلکہ ایک کرپٹ مافیا کے خلاف بر سرپیکار ہے

Spread the love

لنڈی کوتل سے امان علی شینواری ۔
ذوان کوکی خیل اتحاد تنظیم قومیت کی بنیاد پر نہیں بلکہ ایک کرپٹ مافیا کے خلاف بر سرپیکار ہے۔ضلع خیبر کے تعلیم یافتہ نوجونوں کے حقوق کیلئے لڑر ہے ہیں۔محمد اللہ نے نہ صرف کوکی خیل قوم کی بلکہ پوری ضلع خیبر کے ساتھ ناانصافی کی ہے۔مستحق افراد کے حقوق سلب کئے گئے ہیں۔افس اسسٹنٹ محمد اللہ کو ہٹا کے ہی دم لیں گے۔ ہم کسی قوم کے خلاف نہیں۔ان خیالات کا اظہار ذوان کوکی خیل تنظیم کے محمد صدیق، ابرار ، اشفاق ، شاہد و دیگر نے لنڈی کوتل پریس کلب میں پریس کانفرنس میں کیا انہوں نے کہا کہ ڈی ایچ او آفس کے افس اسسٹنٹ محمد اللہ آفریدی نے غیر قانونی طور پر اپنے دو بیٹوں اور سابقہ ڈی ایچ او ڈاکٹر شفیق کے دو بیٹوں کو بھرتی کردیا ہے جس کا ہمارے پاس ثبوت ہیں محکمہ صحت کے ڈی ایچ او افس میں ایک کمیٹی نے اسے غیر قانونی قرار دیدیا ہے۔ اس کے بعدڈائریکٹر ہیلتھ افس میں کمیٹی بنائی گئی اس نے بھی 2019میں ہونے والی بھرتیاں 1973ائین کے منافی قرار دیدیئے۔ہماری جنگ کسی قوم کے خلاف نہیں بلکہ کرپٹ مافیا کے خلاف ہے انہوں نے کہا 19دنوں سے ہم نے احتجاجی کیمپ لگایا ہے اور پلان تھری کے مطابق پولیوسے بھی بائیکاٹ کر لیا ہے انہوں نے کہا کہ جب تک ڈی ایچ او خیبر کے دفتر سے افس اسسٹنٹ محمد اللہ کونہ ہٹا یاجائے تب تک ہمارا احتجاج جاری رہیگا ذوان کوکی خیل کے ممبرز نے مبینہ طورپر الزام عائد کرتے ہوئے کہا کہ محمد اللہ نے جعلی انکوائری رپورٹ بنا کر عدالت کو گمراہ کرنے کی کوشش کی ہے انہوں نے کہا کہ اشتہار میں جونیئر کلرک کی پوسٹ کو اناونس نہیں کیاگیا تھا جبکہ ان کا بیٹا جونیئر کلرک کے عہدے پر تعینات ہو گیا تھا جو آئین پاکستان کے خلاف ہے انہوں نے کہا کہ اس حوالے سے پشاور ہائی کورٹ میں کیس دائر کیا ہے ساتھ ہی ذوان کوکی خیل تنظیم کا 18 ماہ سے احتجاجی تحریک بھی چلی ارہی ہے۔احتجاجی کیمپ کا 19وان دن ہے مگر بد قسمتی سے اج تک کسی بھی عوامی نمائندے نے انے کی ذحمت بھی گوارا نہیں سمجھا۔انہوں نے کہاکہ محمد اللہ کو کچھ اداروں اور چند عمائدین کی پشت پناہی حاصل ہے ہم ان سے درخاست کرتے ہیں ہے کہ ان سے پیچھے ہٹ جائے صدیق آفریدی، ابرار آفریدی اور اشفاق آفریدی نے بتایا کہ لنڈی کوتل جمرود اور باڑہ میں ذوان کوکی خیل کے خلاف منفی پروپیگنڈا کر کے انہیں قومیت اور تعصب کی ہوا دینے کی کو شش کی جا رہی ہے جبکہ ذوان کوکی خیل پورے ضلع خیبر کے اقوام کے نوجوانوں کے حقوق کیلئے جنگ لڑ رہی ہے انہوں نے مطالبہ کیا کہ جب تک عدالت میں کیس کا فیصلہ نہیں آتا اس وقت تک محمد اللہ آفریدی کو عہدے سے باز رکھا جائے ذوان کوکی خیل تنظیم کا پولیو بائیکاٹ جاری ہے اور اسکے بعد پلان ڈی پر غور کیا جائے گا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں