جیکب آباد کی جمس ہسپتال میں جنرل سرجری اور آپریشن روک دئے گئے

Spread the love

جیکب آباد(نامہ نگار) جیکب آباد کی جمس ہسپتال میں جنرل سرجری اور آپریشن روک دئے گئے، ادویات ختم، ڈیڑھ ماہ سے ڈائریکٹر کی تقرری نہ ہونے کی وجہ سے ہسپتال کے معالات شدید متاثر تفصیلات کے مطابق جیکب آباد کی جمس ہسپتال میں ڈیڑھ ماہ سے محکمہ صحت کی جانب سے ڈائریکٹر کی تقرری نہ کرنے کی وجہ سے ہسپتال کے معاملات شدید متاثر ہو گئے ہیں، جمس ہسپتال میں آپریشن اور جنرل سرجریز روک دی گئی ہیں، ادویات بھی ختم ہو گئی ہیں، علاج کے لئے دور دراز سے آنے والے مریضوں کوواپس کیا جا رہا ہے، ہرنیا، اپینڈکس سمیت دیگر طے شدہ آپریشن جنرل سرجن نے ادویات نہ ہونے کی باعث ملتوی کردئے ہیں ادویات نہ ہونے کی وجہ سے مریضوں کو دوا باہر سے خریدنے پر مجبور کیا جا رہا ہے، جبکہ عملے کو اس ماہ تنخواہ بھی نہ ملنے کا خدشہ ظاہر کیا جا رہا ہے اس سلسلے میں جمس کے ایچ آر اصغر سومرو نے رابطے پر بتایا کہ ڈائریکٹر عبدالواحد ٹگڑ کی توسیع کی معیاد ختم ہوئی ہے لیکن گزشتہ بی او جی کے اجلاس میں یہ فیصلہ کیا گیا تھا کہ جب تک نیا ڈائریکٹر تعینات نہیں کیا جاتا چارج عبدالواحد ٹگڑ کے پاس ہو گی، ڈائریکٹر جمس عبدالواحد ٹگڑ ہیں لیکن ان کے پاس ڈی ڈی او پاور نہیں اس لئے ہسپتال میں ادویات کی کمی ہوئی ہے ادھار پر کام چلا رہے ہیں، دوسری جانب سٹی فورم کے حماد اللہ انصاری، عبدالحئی سومرو، ایڈوکیٹ جی ایم سومرو اور دیگر کا کہنا تھا کہ جمس ہسپتال کے ڈائریکٹر کی تقرری کے لئے جان بوجھ کر تاخیری حربے استعمال کئے جا رہے ہیں کرپٹ مافیا اہل، تجربہ کار اور ایماندار ڈائریکٹر کی تقرری میں رکاوٹ ہے محکمہ صحت کی جانب سے فی الفور ڈائریکٹر مقرر کیا جائے بصورت دیگر احتجاج سمیت عدالت سے رجوع کیا جائے گا جمس کی تباہی کسی صورت قبول نہیں، جمس کے ڈائریکٹر کی تعیناتی کے لئے محکمہ صحت کی جانب اشتہار جاری کیا گیا تھا ایک درجن سے زائد امیدواروں نے درخواستیں دی جس کو کئی ماہ ہو چکے ہیں ڈائریکٹر کے لئے امیدواروں سے انٹرویو تک نہیں لئے گئے جمس کی سالانہ 70کروڑ سے زائد بجٹ کی لوٹما رکرنے والی مافیا سے نجات دلائی جائے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں